ہر دور کا اپنا سامراج ہوتا ہے

in Urdu Community19 days ago

Every period has its own imperialism. Its agents exist in different forms. There is a difference between the form of imperialism in the Mughal period and the form of imperialism of the present day, but one thing is common in all imperialist periods that they had religious leaders. And in the words of Karl Marx, religious people make the people ineffective by feeding them religious opium. These people cannot unite and lead a political movement against imperialism. It is very difficult to defeat the imperialist powers in the age of media because it is in the people. They spread confusion. They have capital, power and guns. They are trained in noise and mourning instead of consciousness. To fight the war against imperialism, the intellectual nation must be equipped with western weapons and western technology and education. Otherwise, imperialism will continue to rule over us and we will continue to carry their burden as the decision of destiny

ہر دور کا اپنا سامراج ہوتا ہے۔اسکے ایجنٹ مختلف روپ و بہروپ میں موجود ہوتے ہیں۔مغلیہ دور میں سامراج کی شکل اور موجودہ دور کے سامراج کی شکل میں فرق ہے لیکن سب سامراجی دور میں ایک بات مشترک ہے کہ انکو مذہبی لیڈر میسر ہوجاتے ہیں اور کارل مارکس کے الفاظ میں کہ مذہبی لوگ عوام کو مزہبی افیون کھلا کر ناکارہ بنا دیتے ہیں۔یہ لوگ متحد ہوکر سامراج کے خلاف سیاسی تحریک نہیں چلا سکتے۔میڈیا کے دور میں سامراجی طاقتوں کو شکست دینا بہت مشکل ہے کیونکہ یہ عوام میں کنفیوژن پھیلاتے ہیں۔انکے پاس سرمایہ۔اقتدار اور بندوق ہوتی ہے۔انکو شعور کی بجائے شور اور ماتم کی تربیت دلائی جاتی ہے۔سامراج کے خلاف جنگ لڑنے کے لیے دانشوران ملت کو مغربی ہتھیار اور مغربی ٹیکنالوجی و تعلیم سے آراستہ و پیراستہ ہونا ہوگا ورنہ سامراج ہم پر حکومت کرتا رہے گا اور ہم تقدیر کا فیصلہ سمجھ کر انکا بوجھ اٹھاتے رہیں گے

Coin Marketplace

STEEM 0.23
TRX 0.12
JST 0.029
BTC 67555.35
ETH 3499.18
USDT 1.00
SBD 3.21